11

شہریوں کی فوج سے چھٹی اب ذمہ داریاں روبوٹ سنبھالیں گے

دبئی (ویب ڈیسک )متحدہ عرب امارات میں عنقریب فوج کی ذمہ داریاں روبوٹ سنبھال لیں گے۔غیر ملکی میڈیا کے م طابق مصنوعی ذہانت اور جدید ٹیکنالوجی کو روز مرہ زندگی میں استعمال میں لانے کی پالیسی کے تحت دبئی پولیس نے حال ہی میں ٹریفک پولیس میں روبوٹ تعینات کرنا شروع کیے تھے۔ متحدہ عرب امارات اس باب میں ایک قدم اور
آگے بڑھتے ہوئے اب فوج کے شعبے میں بھی روبوٹ کی تعیناتی کی تیاری کررہا ہے۔دبئی کی پولیس میں اسمارٹ سروسز کے شعبے کے ڈائریکٹر بریگیڈیئر خالد ناصر الرزوقی نے کہا کہ ہم فوج کے شعبے میں بھی روبوٹ کی تعیناتی کی منصوبہ بندی کررہے ہیں۔دبئی میں منعقدہ سائنس چوٹی کانفرنس میں شرکت کے موقع پر الرزوقی نے کہا کہ دبئی میں 27 مختلف سروسز جنہیں انسانی ہاتھوں سے انجام دیا جاتا تھا اب روبوٹس کے حوالے کی جا چکی ہیں۔ دبئی میں پولیس اسمارٹ مرکز قائم کیا گیا ہے۔ اس مرکز میں کسی ثالث کا وکیل کے بغیر روبوٹس شہریوں کو ڈیل کرتے ہیں۔الرزوقی کا کہنا ہے کہ حکومت نے سنہ 2018 میں زیادہ سے زیادہ اسمارٹ پولیس مراکز کے قیام کے ذریعے شہریوں کی 80 فی صد تعداد کے مسائل ان اسمارٹ مراکز میں حل کرنے کی پالیسی اپنائی ہے تاکہ حکومتی مراکز کی طرف لوگوں کو جانے کی زحمت نہ کرنا پڑے اور ان کی شکایات تیزی کے ساتھ نمٹائی جاسکیں۔خیال رہیکہ رواں سال جون میں سنگاپور کی اوتزا کمپنی نے دبئی میں سیکیورٹی امور کی انجام دہی کے لیے روبوٹ تیار کرنے کے ایک معاہدے پر دستخط کیے تھے۔ اس معاہدے کے تحت چند ہفتے قبل دبئی پولیس نے ٹریفک کے شعبے میں روبوٹ تعینات کرکے لوگوں کو حیران کردیا تھا۔دبئی پولیس افسر کا کہنا ہے کہ ٹریفک حادثات اور ٹریفک چالان کے معاملے میں روبوٹ سے کسی غلطی کا کوئی امکان نہیں۔ انسان بہت سے خارجی عوامل سے متاثر ہوتا ہے مگر روبوٹ پر کسی قسم کے انسانی عامل اثر انداز نہیں ہوتے۔ایک سوال کے جواب میں الرزوقی کا کہنا ہے کہ 2020 تک دنیا بھر میں 70 لاکھ انسانوں کی جگہ روبوٹ خدمات انجام دینا شروع کردیں گے، تاہم ان کا کہنا ہے کہ روبوٹ سروسز کے نتیجے میں انسانی روزگار متاثر نہیں ہوگا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں